4 - بیج بونا

Views : 467

Description

عام طور پر جب ایک کسان اپنے قیمتی بیج کو بونے باہر جاتا ہے تو اس بات کو یقینی بناتا ہے کہ مٹی بیج کو حاصل کرنے کے لئے تیار ہے لہذا اس کی فصل بہترین ہوگی. اس مثال میں حضرت عیسی علیہ السلام نے بتایا ہے کہ ایک کسان بونے والے بیجوں کو ہر قسم کی زمین پر آزادانہ طور: چٹائی زمین، کانٹوں والی جا ڑیا ں ، مصروف سڑک کے کنارے، اور کچھ اچھی مٹی کے یچوں میں پر تقسیم کرتا ہے. ظاہر ہے کہ وہ یہ جانتا ہے کہ تمام بیج فصل پیدا نہیں کریں گے اور کچھ بیج کچھ بھی پیدا نہیں کریں گے . یہاں وہ کیا کہنا چاہ رہا ہے . سب سے پہلے ہمیں کسان اور بیج کی شناخت کرنا ہوگا. جیسا کے یہاں حضرت عیسی علیہ السلام کہانی سنا رہے ہیں تو اسلئے وہ اپنے آپکو کسسان کے طور پر پیش کر رہے ہیں . بیج خدا کی سچائی ہے. ہاں، اور چار قسم کی زمین کس چیز کی نمائندگی کررہی ہے؟ یہ مثال کے ہماری زندگی، ہماری انسانیت، ہمارے دلوں کی طرف اشارہ کر رہی ہے. چلیں یہ سوال پوچھتے ...... کیا کسان اپنے بیجوں کو زمین کی جانچ کے بغیر تکسیم کر کے برباد کر دیتا ہے ؟ حضرت عیسی علیہ السلام ایک کسان کے طور پر ایسے نہیں سوچتے. ان کو اس بات کا یقین ہے کہ اس کے کچھ بیج اچھی مٹی کو ڈھونڈ لیں گے اور وہ یہ دیکھتے ہیں کہ بیج کیا کرتے ہیں . یہ کئ سو گنا پیدا کرتا ہے. لہذا اس مثال پر ہمارا جواب کیا ہے. میں کس طرح اپنی زندگی، اپنی انسانیت کو ، اپنے دل کو خدا کے بیجوں حاصل کرنے تیار کروں ؟ ایسا لگتا ہے کہ یہ ہم پر منحصر ہے کے ہم کس ترہا سے اپنے آپکو خدا کے اس مفت بیج حاصل کرنے کے لئے اپنے آپکو کھولیں، اسکے بیٹے، عیسی علیہ السلام کے ذریعہ.