کہانی کا خلاصہ

حضرت عیسی علیہ السلام کی پیدائش1 - حضرت عیسی علیہ السلام کی پیدائش

آخری بار آپ کب حیران ہوئے تھے؟ آخری بار آپ کب اس طرح کے حیرت انگیزچیز کے سامنا کھڑے ہوئے تھے؟ اور صرف حیران ہوئے تھے؟ دو چیزیں ہو سکتی ہیں. پہلی چیز، ہو سکتا ہے آپ جو کر رہے ہیں اس سے روک جائیں اور تعریف کریں کے یہ کتنی حیرت انگیز ہے. یسوع کی پیدائش کی رات جنت میں فرشتوں اور زمین پر انسان جو وہ کر رہے تھے اس سے روک گیے اور ایک ساتھ سب حیر ا ن ھو گئے. فرشتہ نے ان کو کہا ' ڈرو مت اور دیکھو' میں بہت خوشی کی اچھی خبر لایا ہوں جو کے تمام لوگوں کے لئے ہے . آپ کے لئےآج کے دن داؤد کے شہر میں ایک نجات دہندہ پیدا ہوا ہے جو مسیح کا رب ہے. حضرت عیسی علیہ السلام کی زمین کی ابتدائی زندگی میں اس طرح کی معجز ات سے نمایاں طور پرکافی نمایاں تھے. کیونکہ یہ حضرت عیسی علیہ السلام کے لئے اگلے قدم تھا، جو صرف ایک عظیم استاد یا نبی نہیں بلکے اس سے کافی زیادہ تھے. ضرت عیسی علیہ السلام وہ واحد شخص تھے جنہوں نیں گناہوں سے پاک زندگی گز ا ر ی . وہ مکمل طور پر انسان اور مکمل طور پر خدا دونوں تھے. خدا ضرت عیسی علیہ السلام کی ایک بادشاہ کے محل میں پیدائش کا اعلان کر سکتا تھا. لیکن اس نے اپنے فرشتوں کو چرواہوں کے پاس بھیجا. آپ سوچ سکتے ہیں کے خدا نے ایک نیک عورت مریم اور عام چرواہوں کا انتخاب کیوں کیا ؟ کیا یہ آپکو حیران کرتا ہے ؟

ویڈیو دیکھئیے


حضرت عیسی علیہ السلام کی بپتسما2 - حضرت عیسی علیہ السلام کی بپتسما

یودیہا سے گلیلی کا سب سے چھوٹا راستہ سامریہ سے تھا. زیادہ تر یہودی سامریہ کے ذریعے جانے سے گریز کر تے تھے کیونکہ وہ سامریوں کو ناپسندیدہ تھے. اس راستے پر چلتے ہوے ، حضرت عیسی علیہ السلام اور انکے شاگرد شہر سانچر پہنچے . اس جگا ہ کے کریب جہاں حضرت یعقوب رہتے تھے اور جہاں انھوں نے اپنے بیٹے حَضرَت يُوسَف عليہ السَلام کو زمین کا ایک ٹکڑا دیا تھا. حَضرَت يُوسَف عليہ السَلام کا کنواں بھی وہاں پر موجود تھا. عیسی علیہ السلام اپنے سفر سے تھکے ہوے تھے اور دوپہر کے قریب وہ کنویں کے پاس آرام کرنے کیلئے بیٹھ گئے. جب ایک سامری عورت کنویں سے پانی لینے کے لئے آ ئی تو اس نے حضرت عیسی علیہ السلام کے قریب سے پانی نکالا . حضرت عیسی علیہ السلام نے اس سے پوچھا، "کیا تم مجھے پینے کے لئے پانی دو گی ؟" عورت حیران ہوئی اور کہا، "تم یہودی ہو اور میں سامری عورت ہوں." تم مجھ سے پانی کے لئے کیسے پوچھ سکتے ہو ؟ "حضرت عیسی علیہ السلام نے جواب دیا، "اگر تم کو خدا کا تحفہ معلوم ہو تا، اورپتا ہوتا کون ہے جو تم سے پانی کے لئے کیسے پوچھ رہا ہے، تم اس سے پوچ سکتی تھی اور وہ تمکو زندہ پانی دے سکتا تھا ". حضرت عیسی علیہ السلام کا 'زندہ پانی' سے کیا مطلب ہے؟ بعد میں ان کی گفتگو میں بات عورت کی نجی زندگی سے عام عبادت کے سوالات پر چلی گئی . حضرت عیسی علیہ السلام نے کہا ، "مجھے پر یقین کرو، عورت، ایک وقت آتا ہے جب تم نہ ہی پہاڑ پر اور نہ ہی یروشلم میں عبادت کرو گی . آپ سامریوں کو معلوم نہیں ہے کہ آپ کس کی عبادت کرتے ہیں، ہم اس کی عبادت کرتے ہیں جس کے بارے ہم کو معلوم نہیں ہے. یہودیوں سے نجات ہے. ایک ایسا وقت آئے گا جب سچے پیرو کار والد کی روح اوراس کی سچائی کی عبادت کریں گے . والد اس ترہا کے پیرو کارڈھونڈتا ہے . اس عورت نے کہا "میں جانتی ہوں کہ مسیح (عیسی علیہ السلام)آنے والا ہے . جب وہ وہ آئے گا تو ، تو وہ ہمارے لئے ہر چیز کی وضاحت کرے گا. "پھر عیسی علیہ السلام نے اعلان کیا،" میں ہی مسیح ہوں. " عیسی علیہ السلام کا اس بات سے کیا مطلب ہے کہ سچا پیرو کر والد کی روح اوراس کی سچائی کی عبادت کرے گی؟

ویڈیو دیکھئیے


کنویں کے پاس ایک اورت 3 - کنویں کے پاس ایک اورت

یہودیہ سے گلیل تک سب سے سیدھا راستہ سامریہ میں سے گذر جاتا تھا ۔ بہت سے یہودی لوگ سامریہ میں سے جانا انکار کرتے تھے کیونکہ وہ سامریہ والوں کو ناپسند کرتے تھے۔ اسی راہ جاتے ہوئے یشوع اپنے شاگردوں کے ساتھ ایک شہر کے پاس آئے جس کا نام سوؔخار تھا ، جہاں یعقوب رہتا تھا اور اپنے بیٹے یوسف کو زمین دیا تھا ۔ یعقوب کا کنواں وہیں تھا ۔ یشوع اپنے سفر کی وجہ سے تھکا ہوا تھا اور دوپہر کو کنویں کے پاس تھوڑا آرام کرنے کے لئے بیٹھ گیا۔ جب ایک سامری اورت کنویں سے پانی بھرنے کے لئے آئی، اس نے اپنا پانی یشوع کے قریب رکھا۔ یشوع نے اس اورت سے پوچھا کہ ”مجھ کو پانی پلاؤ”۔ اورت حیران ہوئی اور بولی: ”تم یہودی ہو اور میں سامری اورت ہوں۔ مجھ سے کیسے پانی مانگ سکتے ہو؟” یشوع نے جواب دیا:” جو خدا دیتا ہے اسکے بارے میں نہیں جانتے اور تجھے نہیں معلوم کہ میں کون ہوں۔ اور تجھ سے پا نی مانگ رہا ہوں۔ اگر ان باتوں کو تُو جانتی تو تُو مجھ سے پو چھتی اور میں تجھے زندگی کا پا نی دیتا”۔

ویڈیو دیکھئیے


بیج بونا 4 - بیج بونا

 

عام طور پر جب ایک کسان اپنے قیمتی بیج کو بونے باہر جاتا ہے تو اس بات کو یقینی بناتا ہے کہ مٹی بیج کو حاصل کرنے کے لئے تیار ہے لہذا اس کی فصل بہترین ہوگی. اس مثال میں حضرت عیسی علیہ السلام نے بتایا ہے کہ ایک کسان بونے والے بیجوں کو ہر قسم کی زمین پر آزادانہ طور: چٹائی زمین، کانٹوں والی جا ڑیا ں ، مصروف سڑک کے کنارے، اور کچھ اچھی مٹی کے یچوں میں پر تقسیم کرتا ہے. ظاہر ہے کہ وہ یہ جانتا ہے کہ تمام بیج فصل پیدا نہیں کریں گے اور کچھ بیج کچھ بھی پیدا نہیں کریں گے . یہاں وہ کیا کہنا چاہ رہا ہے . سب سے پہلے ہمیں کسان اور بیج کی شناخت کرنا ہوگا. جیسا کے یہاں حضرت عیسی علیہ السلام کہانی سنا رہے ہیں تو اسلئے وہ اپنے آپکو کسسان کے طور پر پیش کر رہے ہیں . بیج خدا کی سچائی ہے. ہاں، اور چار قسم کی زمین کس چیز کی نمائندگی کررہی ہے؟ یہ مثال کے ہماری زندگی، ہماری انسانیت، ہمارے دلوں کی طرف اشارہ کر رہی ہے. چلیں یہ سوال پوچھتے ...... کیا کسان اپنے بیجوں کو زمین کی جانچ کے بغیر تکسیم کر کے برباد کر دیتا ہے ؟ حضرت عیسی علیہ السلام ایک کسان کے طور پر ایسے نہیں سوچتے. ان کو اس بات کا یقین ہے کہ اس کے کچھ بیج اچھی مٹی کو ڈھونڈ لیں گے اور وہ یہ دیکھتے ہیں کہ بیج کیا کرتے ہیں . یہ کئ سو گنا پیدا کرتا ہے. لہذا اس مثال پر ہمارا جواب کیا ہے. میں کس طرح اپنی زندگی، اپنی انسانیت کو ، اپنے دل کو خدا کے بیجوں حاصل کرنے تیار کروں ؟ ایسا لگتا ہے کہ یہ ہم پر منحصر ہے کے ہم کس ترہا سے اپنے آپکو خدا کے اس مفت بیج حاصل کرنے کے لئے اپنے آپکو کھولیں، اسکے بیٹے، عیسی علیہ السلام کے ذریعہ.

 ویڈیو دیکھئیے


اچھا سمیرین 5 - اچھا سمیرین

میرا پڑوسی کون ہے ؟ شروع میں یہ سوال ہم سب کے لئے بہت واضح ہے.
 یہ وہ شخص ہے جو ہمارے ساتھ، ہمارے معاشرے، ہماری سیاسی تعلقات ، ہمارے شہر، یا ہمارے ملک میں رہتا ہے.
 اگر ہم کو ایک شخص ملا لوٹا ہوا ، بگیر کپڑوں کے، مارا پیٹا ہو ا اور  سڑک کے کنارے چھوڑ ا ہوا ہم اس کی مدد کر سکتے ہیں اگر ہم اسے ان پڑوسیوں میں سے ایک کے طور پر تسلیم کریں جوکہ کافی درست ہیں.
 لیکن حضرت عیسی علیہ السلام نے ایک مختلف قسم کے پڑوسی کی تصویر پیش کی ہے.
 اگر آپ میں ہمت ہے تو پھر کہانی کو آگے پڑھیں اور یہ پانچ چیز آپ کو سوچ کے لۓ وجہ دین گیں .
 ١ . اچھے سماروی كےدل میں رحم تھا اور اس نے اس پر عمل کیا.
 ٢ . اگرچہ زود وکوب کی ہوئی انسانی نسل ا س سے نفرت کرتی تھی ، پھر بھی سماروی نے نسلی اختلافات کو ایک طرف الگ کر دیا .
  ٣ . اچھے سماروی نے جو پیسے اس کی جیب میں تھے ان میں سے پیٹا ہوے آدمی کو دیئے بغیر اس کی تشویش کیئے کو وه اس کو واپس ملیں گے کہ یہیں
 ۴ . اچھے سماروی پر لوگوں کا اعتماد تھا سراۓ چلانے والے اس پر اعتماد کرتے تھے اور اس كي بات پر یقین کرنے تھے.
 ۵ . اچھے سماروی ایک بہت سخی انسان تھا اور ممکنہ طور پر وه بہت آسانی سے قرض اپنے اوپر چڑھا سکتا تھا اس وقت تک جب تک پیٹا ہو ا آدمی واپس اپنے پروں پر کھڑا نہیں ہو جاتا .
 جب حضرت عیسی علیہ السلام نے اپنی مثال مکمل کی تو قانون کا استاد جسنے سوال پوچھا ہرات سے دنگ رہ گیا ، یہ جان کہ وہ کبھی بھی اس آزمائش پر پورا نہیں اتر سکتا . کیا ہم اس آزمائش پر پورا اتر سکتے ہیں ؟ مجے معلوم ہے کے میں خدا کی مدد کے بگیر اس آزمائش پر پورا نہیں اتر سکتا

.

ویڈیو دیکھئیے


رب کی دعا 6 - رب کی دعا

کیا آپ کبھی ارد گرد گوم رہی زندگی کی ذمہ داریوں اور پریشانیوں کے پہاڑ، درد اور انسانیت کی پریشانی سے حیران ھوۓ ؟ کیا کائنات طاقتور چیزوں کی منصوبہ بندی میں ہماری چھوٹی سی دھول کو بھی تسلیم کرتی ہے؟ ہم اتنی معمولی چیز نظر آتے ہیں، جیسے ہوا کا جھو نکا ، ایک سانس میں ہم موجود ہیں اور ایک دوسرے سانس میں ہم ختم ہو جاتے ہیں . اس میں خدا کہاں ہے؟ کیا اسکو اس بات کی پروا ہے . حضرت عیسی علیہ السلام کے مطابق خدا اس بات کی کو پروا ہے . حضرت عیسی علیہ السلام ہمیں سکھاتے ہیں کہ کس طرح خدا سے بات کریں اورکس طرح اس سے رابطہ کریں. اور سب سے زیادہ حیرت انگیز وہ ہمیں بتاتے ہیں کہ ہم خدا کو اپنے والد کے طور پر خطاب کرنا ... والد . یعنی وہ ہمارے اتنا قریب ہےجتنا ہمارا

ویڈیو دیکھئیے


گالگوتھا 7 - گالگوتھا

حضرت عیسی علیہ السلام کو صلیب پر چڑھانے کی اداکاری کو دیکھنا کافی مشکل ہے.
 لہذا مسیحی کیوں اس ظالمانہ واقعے پر توجہ مرکوز پر زور دیتے ہیں؟
 بہت سے لوگ حضرت عیسی علیہ السلام کو ایک اچھے انسان کے طور پر،ایک عظیم نبی کے طور پر بھی یاد رکھنا چاہتے ہیں لیکن وہ انکی تصلیب سے انکار کرنے پر اصرار کرتے ہیں.
 عیسی صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی تصلیب سے انکار کرنے سے خدا کی تمام انسانیت کے لئے رحمت خراب ہو جاتی ہے .
 کیونکہ عیسی صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی تصلیب سے ہماری گنہگار فطرت کی بھی حضرت عیسی علیہ السلا م کے ساتھ صلیب پر موت ہو گئی.
 خدا نے یہ واضح کردیا کہ ہماری گنہگار فطرت سے کوئی اچھی چیز نہیں بن سکتی.
 اسکے لئے گناہ ایک بالکل خراب، بیکار چیز ہے جس نے اس کو موت کی سز سنائی اور اس کو کیل سے صلیب پر گاڑ دیا.
  تصلیب کے اس دردناک عمل کے ذریعہ ، خدا نے ان لوگوں کی گنہگار نوعیت کو مار دیا اور ان کے ایمان کو حضرت عیسی علیہ السلا م میں رکھ دیا .
 رسول پال نے رومن 6:6 میں لکھا ہے کہ عیسائی مومنوں کی بھی " انکے کے ساتھ تصلیب ہو گئی".
 وہ یہی بات جاری رکھتے ہوئے رومن 6:11 لکھتا ہے " لہذا آپ کو اپنے آپ کو بھی گناہوں پر مرنے پر اور خدا کے لئے حضرت عیسی علیہ السلا م میں زندہ رہنے پر غور کرنا ہوگا".
 دنیا کے لئے یہ عقیدہ بیوقوفا نہ لگتا ہے.
 اس کے باوجود، اس خوفناک عمل نے دنیا کے لئے سب سے بڑی برکت پیدا کی ہے اور وہ حاصل کر لیا ہےجو انسانی حکمت حاصل نہیں کر جاسکتی ہے-انسان کی گناہ کی غلامی سے رہائی.

ویڈیو دیکھئیے


حضرت عیسی علیہ السلام مر نے كے باد دوبارہ زنده ھوئے 8 - حضرت عیسی علیہ السلام مر نے كے باد دوبارہ زنده ھوئے.

حضرت عیسی علیہ السلام کی تصلیب سے کہانی کا اختتام نہیں ہوا.
 دراصل، کئی طریقے سے، یہ صرف ایک آغاز ہے.
 جب حضرت عیسی علیہ السلام اپنے شاگردوں کے ساتھ کمرے میں داخل ھوۓ ، انہوں نے اپنے خوف پر کابو پایا ، امن کی خواہش ظاہر کی، اور پھر ان کو ظاہر کرنا شروع کر دیا کے وہ کس طرح خدا کے پرانے عہد نامہ میں موجود وعدہ کی تکمیل ہیں. (دیکھیں لیوک 24:44).
 یسوع نے واضح طور پر خود کو متعارف کرایا کے وہ خدا کے پرانے عہد نامہمیں موجود وعدوں کی تکمیل ہیں .
 رسول پال نے بعد میں اس خوشخبری کا خلاصہ ا س تررہا سے بیان کیا تھا کہ " صحابہ کے مطابق حضرت عیسی علیہ السلام نے ہمارے گناہوں کے لئے اپنی جان دی اور انکو دفن کیا گیا تھا اور صحیفوں کے مطابق تیسرے دن حضرت عیسی علیہ السلام دوبارہ اوپر اٹھ گہے." (ا کور 14: 4). اگر حضرت عیسی علیہ السلام مرنے کے بعد دوبارہ زندہ نہیں ہوے تو ،
  عیسائیوں کا عقیدہ بیکار ہے. کوئی خوشخبری نہیں تھی، جب تک کہ جو انسان کی انسانیت کے گناہوں کے لئے مر گیا، وہ دوبارہ زندہ نہیں ہو تا. سب شک جو حضرت عیسی علیہ السلام کی موت سے شاگردوں پر گر پڑے وہ ایک لمحے میں مٹ گئے جب فرشتہ نے قبرستان میں عورتوں سے کہا، "تم مردوں کے درمیان زندہ کیوں ڈھونڈتے ہو؟ وہ یہاں نہیں ہے، لیکن دوبارہ زندہ ہو گیا ہے " (لوق 24: 5-6). کیا آپ حضرت عیسی علیہ السلام کی موت میں اپنے لئے نجات پر یکین کرتے ہیں، جس میں گناہ اور اس کے نتائج سے نجات حاصل ہوتی ہے ؟ کیا آپ کو یقین ہے کہ حضرت عیسی علیہ السلام وہی ہے جو وہ کہتا ہے؟

ویڈیو دیکھئیے